سدھنوتی: آزادکشمیر کے تعلیمی اداروں میں تدریسی بائیکاٹ

رپورٹ: اساتذہ ایکشن کمیٹی /PTUDC سدھنوتی

مورخہ 10 دسمبر سے سکول ٹیچرز آرگنائزیشن آزادکشمیر کی کال پہ آزاد کشمیر کے تمام تعلیمی اداروں میں تدریسی بائیکاٹ کا آغاز کر دیا گیا۔ مورخہ 3 دسمبر کو مجلس عاملہ سکول ٹیچرز آرگنائزیشن آزادکشمیر کے اجلاس میں 10 دسمبر سے تدریسی بائیکاٹ کا اعلان کا اعلان کیا گیا تھا۔ اساتذہ آزادکشمیر کے مطابق اساتذہ آزادکشمیر 4 اکتوبر سے احتجاجی عمل میں شریک ہیں اور حکومتی اہلکاران و بیوروکریسی سے بیسیوں بار مذاکرات کیے جا چکے ہیں، جبکہ مطالبات کو جائز قرار دینے اور عمل درآمد کی یقین دہانیوں کے باوجود ابھی تک مطالبات پہ عمل درآمد نہ ہو سکا ہے۔ حکمران محکمہ تعلیم کو برباد کر کے محکمہ تعلیم کی نجکاری کرنے کے درپے ہیں۔ حکمرانوں کی اولادیں سرکاری تعلیمی اداروں میں تعلیم حاصل نہیں کرتیں جبکہ سرکاری تعلیمی اداروں میں غریبوں کی اولادیں زیر تعلیم ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ حکمرانوں کو غربا کے بچوں سے کوئی ہمدردی نہ ہے۔ حکمرانوں کو اگر کوئی ہمدردی ہوتی تو گزشتہ 2 ماہ سے اساتذہ کے ساتھ مذاکراتی عمل کے نام پر سازشیں اور تاخیری حربے نہ استعمال کیے جاتے۔

تدریسی بائیکاٹ کے ضمن میں پائلٹ ہائی سکول پلندری میں بھی ہڑتالی کیمپ لگایا گیا اور تدریس کا بائیکاٹ کیا گیا۔ ہڑتالی کیمپ میں اساتذہ پائلٹ ہائی سکول پلندری نے بھرپور شرکت کی اور مطالبات حل کیے جانے تک احتجاج جاری رکھنے کا عزم کیا۔ ہڑتال کو منظم کیے جانے کے حوالے سے ایکشن کمیٹی کا انتخاب بھی عمل میں لایا گیا۔ ہڑتالی کیمپ سے سرپرست اعلی سکول ٹیچرز آرگنائزیشن سدھنوتی مظہر اقبال، سابق تحصیل صدر سہگل سعید اور سعد ناصر نے خطابات کیے۔

واضح رہے کہ 13 دسمبر کو مظفرآباد میں مرکزی احتجاج منعقد کیا جائے گا اور آئندہ لائحہ عمل طے کیا جائے گا۔ اساتذہ سدھنوتی عارف شاہین کی قیادت پر اعتماد کرتے ہوئے 13 دسمبر کے احتجاج میں بھرپور شرکت کرتے ہوئے مطالبات تسلیم کیے جانے تک تحریک جاری رکھیں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*