Articles

کسان لانگ مارچ: نجاتِ دیدہ و دل کی گھڑی نہیں آئی!

کسان لانگ مارچ: نجاتِ دیدہ و دل کی گھڑی نہیں آئی!

March 13, 2018 at 12:49 pm 0 comments

سرکار کی جانب سے اس معاہدے پر عمل درآمد کرنا باقی رہتا ہے۔

چائلڈ لیبر:  بچوں کا بدترین استحصال

چائلڈ لیبر: بچوں کا بدترین استحصال

February 17, 2018 at 12:00 am 0 comments

یہ لاکھوں بچے جو چائلڈ لیبر کہلاتے ہیں، سڑکوں ، دکانوں سے لے کر گھروں تک میں اذیت بھری زندگی بسر کر رہے ہیں۔

حرفِ حق دل میں کھٹکتا ہے جو کانٹے کی طرح

حرفِ حق دل میں کھٹکتا ہے جو کانٹے کی طرح

January 20, 2018 at 12:38 pm 0 comments

کون پاکستان برائے فروخت کا بورڈ اس حکومت اور بیورو کریسی کے گلوں سے اتارے گا۔

چنگاری، شعلے میں بدلے گی!

چنگاری، شعلے میں بدلے گی!

January 11, 2018 at 12:00 am 0 comments

مزدور اگراپنے جمودکی زنجیروں کو توڑ کر نکل پڑا تو پھر پولیس تو کیا، پوری ریاست کا جبربھی اسے آگے بڑھنے سے نہیں روک سکے گا۔

اکنامک زونز: محنت کے بدترین استحصالی مراکز ؟

اکنامک زونز: محنت کے بدترین استحصالی مراکز ؟

November 4, 2017 at 8:00 am 0 comments

اتھارٹی کے قوانین کے مطابق ان زونز میں پاکستان کے لیبر قوانین مثلاًصنعتی تعلقاتی آرڈیننس کا اطلاق نہیں ہوتا، اس لئے یہاں پر کسی قسم کے حقوق کا سوال کرنا بھی غیر قانونی ہے۔

بلوچستان کے محنت کشوں کی حالت زار

بلوچستان کے محنت کشوں کی حالت زار

October 21, 2017 at 12:22 am 0 comments

جن علاقوں سے یہ وسائل نکالے جار ہے ہیں وہاں کی مقامی آبادی نہ صرف ان سے محروم ہے بلکہ بھوک اور افلاس کی اتھاہ گہرائیوں میں غرق ہیں۔

سانحہ بلدیہ ٹاؤن: وہ جھلسے بدن آج بھی سلگ رہے ہیں!

سانحہ بلدیہ ٹاؤن: وہ جھلسے بدن آج بھی سلگ رہے ہیں!

September 11, 2017 at 9:06 pm 0 comments

طبقاتی سماج میں ’’قانون‘‘ صرف غریبوں کے لئے ہوتا ہے جسے طاقتور چیر کر نکل جاتے ہیں۔ سرمائے کے اس نظام میں مزدور کا لہو بہت سستا ہے!

ہڑتال کے موضوع پر

ہڑتال کے موضوع پر

August 13, 2017 at 6:41 pm 0 comments

ہڑتالیں محنت کشوں کو باور کرواتی ہیں کہ ریاست ان کی دشمن ہے اور ریاست کے خلاف متحد ہو کر جدوجہد کرنی چاہیے۔

کوئلے کی کانیں، موت کی دکانیں !

کوئلے کی کانیں، موت کی دکانیں !

August 8, 2017 at 12:24 am 0 comments

محنت کشوں کی اکثریت غربت اوربیروزگاری سے تنگ آ کر کوئلے کی کانوں کی شکل میں بنے موت کے کنوؤں میں جان گنوانے پر مجبور ہوتے ہیں۔

ریل بانوں کے نام

ریل بانوں کے نام

July 31, 2017 at 9:00 am 0 comments

سرمایہ داری کے اندر رہتے ہوئے اصلاحات اور ترقی کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ محکوم عوام کی نجات کے لیے اس کا خاتمہ ناگزیر ہے۔