کراچی : آدم جی انجینئرنگ میں ایمپلائیز یونین کی طرف سے چارٹر آف ڈیمانڈ کی منظوری کی خوشی میں شاندار تقریب

رپورٹ:  ایم  اے  وارثی

آدم جی انجینئرنگ ایمپلائیز یونین چارٹرآف ڈیمانڈ کی منظوری کی خوشی میں محنت کشوں اور دیگر رہنمائوں کے اعزاز میں تقریب کے موقع پر سندھ لیبر فیڈریشن کی جانب سے آدم جی انجینئرنگ سی بی اے کے عہدیداران نوید احمدصدر، عادل احمد جنرل سیکریٹری، افضال محمد ، محمد عامر، عدیل احمد، وجاہت علی کواعزازی شیلڈ دیئے گئے ۔  مزدور فیڈریشنوں اور مزدور رہنمائوں نے بھرپور شرکت کی جن میں حبیب الدین جنیدی (حبیب بینک) ، لیاقت علی ساہی (اسٹیٹ بینک) وقار میمن (PWF)،  ملک غلام محبوب پی سی ہوٹل،  مقدر الزمان ریلوے ،  ریاض عباسی (NTUF)،  کبیر تمنا (لاہور) ،  دھنی بخش سموں (پاکستان اسٹیل) ،  سید نعیم الحق(پاکستان اسٹیل)،  اسرار احمد (کوہ نور)،  جنت حسین (PTUDC)،  سعید احمد خان (سوئی گیس)،  ظہور احمد (جنرل ٹائر)  سمیت دیگر صنعتی اداروں  کے محنت کش اور ان کے نمائندوں نے شرکت کی ۔  تقریب کی نظامت کے فرائض پی آئی اے کے رہنما شیخ مجید نے انجام دیئے جبکہ تقریب کی صدارت کرامت علی نے کی۔  


تقریب سے اسٹیٹ بینک کے مزدور رہنما لیاقت ساہی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کسی بھی ادارے میں ڈیمانڈ منظور ہونا محنت کشوں پر کوئی احسان نہیں بلکہ یہ ان کا قانونی حق ہے۔  مزدور 12 گھنٹے کام کرتے ہیں لیکن اپنے حقوق سے محروم رہتے ہیں۔  پیپلز لیبر یونین سوئی صدر گیس کے رہنما سعید خان  نے خطاب میں کہا کہ متحد ہوکرہی مزدور طاقت حاصل کرسکتے ہیں اتحاد کی طاقت سے ہی مزدوروں کے مسائل حل ہوں گے۔   PILER کے کرامت علی نے کہا کہ مالکان ٹریڈ یونینز کو تسلیم نہیں کرتے ٹریڈ یونینز ادارے تک محدود نہ ہو اتحاد پیدا کریں دوسروں کی مدد کریں اور انہوں نے ماضی کی ٹریڈ یونین کی تاریخ پر روشنی ڈالی۔  ہوٹل ورکرز فیڈریشن کے رہنما غلام محبوب نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مزدور مسائل کارخانے کے اندر مضبوط یونین سے ہی حل ہوسکتے ہیں اور PC ہوٹل کراچی کے مزدور سولہ سال سے انتظامیہ کے ظلم کا شکار ہیں۔  انٹرنیشنل یونین آف فوڈز پاکستان کے رہنما قمرالحسن نے کہا کہ مزدور تحریک میں کامیابی مستقل نہیں رہتی ضرورت اس بات کی ہے کہ کامیابی کو برقرار رکھا جائے۔  سینئر ٹریڈ یونین رہنما حبیب الدین جنیدی نے کہا کہ مزدور انقلاب کے لئے کام کریں،  ملک میں کارخانے لگائے جائیں تاکہ روزگار میں اضافہ ہو۔  سندھ لیبر فیڈریشن کے صدر شفیق غوری نے خطا ب میں کہا کہ مزدور رہنما حق لینا سیکھیں اپنے فرض کو پورا کریں مزدوریونین مضبوط کریں گے تو حق ملیں گے۔  لاہور سے آئے ہوئے سماجی کارکن اور گلوکار جواد احمد نے کہا مزدور کی محنت سے ترقی ہوتی ہے مزدور کو اپنی طاقت کا پتہ نہیں آدم جی انجینئرنگ میں صنعتی تعلقات اچھے ہیں،  ریاستی مشینری سرمایہ دارانہ نظام کو مضبوط بناتی ہے مزدور اور اس کے بچے علاج معالجہ اور تعلیم سے محروم ہیں۔  

 اس تقریب کے موقع پر شریک  مزدور نمائندگان نصیرالدین ،  مسرور احمد، ظہور اعوان ،  ارشار علی،  ظفر عاقل اور دیگر نے آدم جی انجینئرنگ کے مزدوروں کو کامیابی پر مبارک باد دی اور آخر میں آدم جی انجینئرنگ ایمپلائیز یونین  CBA کے جنرل سیکریٹری محمد عادل خان نے جدوجہد اور تاریخی کامیابی کے حاصلات پر بات کی اور آنے والے تمام مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔
 
آدم جی ایمپلائیز یونین سی بی اے اورانتظامیہ کے درمیان چارٹر آف ڈیمانڈ کے کچھ اہم نکات مندرجہ ذیل ہیں۔

٭     اس اجتماعی معاہدے کی روشنی میں محنت کشوں کی ماہانہ تنخواہ 4000 سے 6500  روپے تک کا اضافہ ہوگا ۔ دیگر مراعات میں بیسک آف گراس سیلری : 55 فیصد اضافہ ،  ہائوس رینٹ میں 30 فیصد  اضافہ ،  یوٹیلیٹی الائونس میں 20 فیصد اضافہ ،  ماہانہ پروڈکشن الائونس 1100 روپے اور معذور افراد کا الائونس ماہانہ  3000 روپے شامل ہیں۔
٭     60 سال کی عمر میں 25 سال سروس مکمل کرنے پر ایک لاکھ روپے جبکہ 20 سال یا 25 سال سے کم پر 75 ہزار دیئے جائیں گے۔
٭    یونیفارم  (ٹی شرٹ،  پینٹ ،  برشرٹ  پینٹ یا شلوار قمیص جیسا مناسب ہوگا )  بمعہ جوتے اور پی کیپ کے ہرسال ملے گا۔
٭    دودھ کی سہولت 1/2 لیٹر دودھ روزانہ ان ملازمین کو ملے گا جو یہ سہولت لے رہے ہیں ۔
٭    کمپنی لون،  برائے فاسٹر ڈیپارٹمنٹ 1,600,000 روپے اور برائے powder maintenance ڈیپارٹمنٹ 8,00,000 روپے ہو گا۔
٭    چھٹیاں قانون کے مطابق C/L ،  S/L اور 16 دن کی رخصت سال میں قانون کے مطابق ملیں گی۔