مزدور پرامن طور پر بھی حق مانگے تو لاٹھیاں اور گرفتاریاں !

تحریر: فاروق طارق

ابراہیم فائبر فیصل آباد کے برطرف مزدوروں کے پرامن دھرنا پر فیصل آباد انتظامیہ نے گزشتہ رات 12:40 پر وحشیانہ لاٹھی چارج متعدد مزدور شدید زخمی باقی مزدوروں کو شہر کے مختلف تھانوں میں بند کردیا، موبائل چھین لئے گئے اور ڈنڈوں کی بارش کی گئی۔

اس مل سے کورونا کے دوران 3,000 سے زائد مزدوروں کو بیروزگار کیا گیا۔ ابراہیم فائبر کے یہ برطرف مزدور پانچ ماہ سے دربدر کی ٹھوکریں کھا کر پرامن احتجاج کر رہے ہیں۔ اور اب انتظامیہ اور لیبر ڈیپارٹمنٹ کی ملی بھگت سے مزدوروں پر وحشیانہ تشدد اور گرفتاریاں کی گئی ہیں۔

نہتے مزدوروں پر وحشیانہ لاٹھی چارج اس لئے کیا گیا وزیراعظم عمران خان اور ابراہیم گروپ آف انڈسٹری کے مالک نعیم مختار کی آپس میں دوستی ہے۔

گزشتہ رات 12:40 پر پولیس کی بھاری نفری کو بسوں میں بھر کرلایا گیا اور آتے ہی مزدوروں پر تشدد اور گرفتاریاں شروع کردیں، ابھی تک معلوم نہیں ہو سکا کہ کتنی گرفتاریاں ہوئی ہیں۔ لیکن جو معلومات ملی ہیں ان کے مطابق 50 سے زیادہ مزدور اس وقت مختلف تھانوں میں بند ہیں۔

لیبر قومی موومنٹ اور حقوق خلق موومنٹ اس واقعہ کی پرزور مزمت کرتی ہے، اس پر خاموشی اختیار نہیں کی جائے گی۔ آج اس وحشیانہ تشدد کے خلاف لائحہ عمل کا اعلان ہو گا۔

آپ سے بھی درخواست ہے کہ فیصل آباد انتظامیہ کی جانب سے پرامن دھرنے پر بیٹھے مزدوروں پر وحشیانہ تشدد اور گرفتاریوں کی شدید مذمت کریں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*