صادق آباد: یوم مئی کی محدود تقریب کا انعقاد

رپورٹ: نمائندہ مزدورنامہ، صادق آباد

صادق آباد میں یوم مئی کی تقریب کا مقامی سطح پر روایتی تقریب کے طورپرانتظارکیا جاتا ہے۔ شہریوں کی بہت بڑی تعداد یوم مئی کی ریلی اور جلسے میں گہری دلچسپی رکھتے اور اپریل کے مہینے سے پروگرام کے بارے میں استفسار کرنا شروع کردیتے ہیں۔ عام طور پر شہری ریلی کے راستے میں پانی اور شربت کی سبیلیں لگاتے ہیں اور ریلی کے راستے میں دوکاندار ہاتھ ہلا کر اپنی یکجہتی کا اظہار کرتے ہیں۔ کورونا کی جان لیوا عالمی وبا کے سبب گزشتہ سال کی طرح اس سال بھی ”یوم مئی“ کی روایتی تقریبات کا انعقاد ممکن نہ تھا۔ لہٰذا مزدور رہنماؤں، سیاسی کارکنوں اور یوم مئی کی تقریبات کے آرگنائزر کے ساتھ مسلسل مشاورت کے بعد یوم مئی کوبہت چھوٹے پیمانے پر منانے کا پروگرام بنایا گیا۔ اس ضمن میں محنت کش ساتھیوں کی بجائے مختلف تنظیموں کے رہنماؤں پر مشتمل ایک چھوٹی سی تقریب کا انعقاد کیا گیا۔

فوجی فرٹیلائزرکمپنی کے پلانٹ کے ساتھ محنت کشوں کی رہائشی ’بستی لاشاری‘ میں یوم مئی کی تقریب کوچار دیواری کے اندرمنعقد کیا گیا۔ تقریب میں اسٹیج سیکریٹری کے فرائض عباس تاج نے سرانجام دیئے جب کہ شرکاء سے علی حسن‘فنانس سیکریٹری مزدور یونین (سی بی اے) فاطمہ فرٹیلائیزر کمپنی، نواب دین لاشاری‘ جنرل سیکریٹری ایمپلائیز یونین FFC (سی بی اے) فوجی فرٹیلائیزر کمپنی اور قمرالزماں خاں‘ سیکریٹری جنرل پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپئین نے خطاب کیا۔

مقررین نے یوم مئی کا تاریخی تعارف کرواتے ہوئے اسکے محنت کش طبقے پر اثرات پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے موجودہ حالات میں درپیش مسائل اور سرمایہ داری نظام کے حملوں اور انکے اثرات کا تفصیل سے احاطہ کیا۔ مقامی صنعتوں میں ٹھیکے داری نظام کی وجہ سے مزدوروں کے کئی درجوں میں استحصال کے خاتمے کیلئے مزدور ہنماؤں نے ٹھیکے داری نظام کے خاتمے کا مطالبہ کیا۔

شرکا نے سرمایہ داری نظام، جاگیرداری اور استحصال کے خلاف نعرے بازی کی۔