کراچی: نادرا بحالی تحریک اور پی ٹی یو ڈی سی کی جانب سے مظاہرہ

رپورٹ: PTUDC کراچی

نادرا کو آمرانہ طرز عمل پر چلایا جارہا ہے، رضا خان سواتی
جعلی انکوائریوں ،جبری برطرفیوں ،غیر قانونی پر و موشنزکا سلسلہ بند کیا جائے، رضا خان سواتی
یونین سازی جمہوری حق ہے نادرا ملازمین کو بھی یونین سازی کا حق دیا جائے، قمر الزمان خاں

نادرا بحالی تحریک اور پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپئین PTUDC کی جانب سے کراچی پریس کلب کے سامنے جعلی انکوائریوں، جبری برطرفیوں،غیر قانونی پر و موشنز اور یونین سازی پر پابندیوں کے خلاف مظاہرہ کیا گیا۔ مظاہرے میں بڑے پیمانے پر برطرف نادرا ملازمین سمیت مختلف ٹریڈ یونین وسماجی سیاسی تنظیموں کے رہنما ﺅں نے شرکت کی مظاہرے کی قیادت نادرا ملازمین بحالی تحریک کے کنوینیر اور پی ٹی یو ڈی سی  سندھ کے نائب صدر رضا خان سواتی نے کی۔ مظاہرین نے رواں ذیادتیوں کے خلاف نعرے لگائے۔

اس موقع پر مظاہرین سے کنوینیر رضا خان سواتی ، پی ٹی یو ڈی سی سندھ جنرل سیکریٹری ایڈوکیٹ نثار احمد چانڈیو، ڈپٹی جنرل سیکریٹری اکبر میمن، مرکزی جنرل سیکرٹری پی ٹی یو ڈی سی قمر الزمان خان، بحالی تحریک کے رہنما انیس زیدی، بختیار خان، ریلوے ورکرزیونین کے مرکزی رہنما جنید اعوان، نیشنل لیبر فیڈریشن کے رہنما ناصر منصور اور مختلف سیاسی وسماجی تنظیموں کے رہنمائوں نے برطرف ملازمین سے یکجہتی کرتے ہوئے کہا کہ نا صرف ملکی بلکہ بین الاقوامی شہرت کا حامل ادارہ ہے جس نے پورے جنوبی وسنٹرل ایشاءمیں جدید ٹیٹا بیس بنانے کا اعزاز حاصل کیا ہے۔ بد قسمتی سے اس ادارہ اپنے آغاز سے ہی ایک آمرانہ طرز عمل پر چلانے کی کو شش کی گئی، ادارے میں سر ے سے نہ کوئی سروس اسٹریکچر ہے اور نہ ہی ملازمین کو کسی قسم کی تنظیم یا یونین سازی کا جمہوری حق حاصل ہے۔ادارے میں کیثرتعداد میں ڈائریکٹر جنرل بر اجمان ہیں جو بدترین آمرانہ طرزعمل اختیار کرتے ہوئے ملازمین کا ذہنی ومعاشی استحصال کا سبب بن رہے ہیں۔ ملازمین آج بھی جعلی نکوائریوں ،جبری بے دخلیوں ،غیر قانونی من پسند پر وموشنزودیگر مسائل کا شکار ہیں ماضی میں ملازمین تحریکوں کی کامیابیوں کے نتیجے میں جنم لینے والی ریگو لائزیشن بھی ملازمین کے لیئے کوئی بہتر توید نہ بن سکی بلکہ آج ملازم دہرے استحصال کا شکار ہے۔

اس واحد ادارے میں پاکستان میں دیگر اداروں کے مقابلے میں سب سے زیادہ ملازمین کے کیڈرز پائے جاتے ہیں اور آئے روزنئے نئے تجربات کرکے ادارے جت چھوٹے ملازمین کے کیڈرزان کی مرضی کے خلاف بدل دئے جاتے ہیں جبکہ یہی مسائل پروموشنز بورڈ کے حوالے بھی دیکھے گئے ہیں۔ جہاں سینئر ملازمین کو ان کی سینیارٹی بنیاد پر ترقی دینے کے بجائے سیاسی بنیاد پر اپنوں کو نوازا جاتا ہے، ملازمین کے حقوق کی جہدو جہد کی پاداش میں تحریک کی قیادت کرنے کئی رہنما ﺅں کو جھوٹے اور من کھڑت الزامات کی پاداش میں غیر جمہوری طریقے سے نوکریوں سے بے دخل کیا گیا اور یہ سلسلہ آج تک جاری ہے انتظامیہ کے اس آمرانہ طرز عمل کی وجہ سے کئی برطرف ملازمین نہ صرف معاشی استحصال کا شکار ہوئے اور فاقہ کشی پر مجبور ہوئے اور بدترین اذیت کا شکار بنے۔

اس موقع پر ارباب اختیار سے مطالبہ کیا گیا کہ نادرا ملازمین کو جبری طور ادارے سے بے دخل کرنا بند کیا جائے اور تما م جبری برطرف ملازمین کو فوری طور پر بحال کیا جائے۔ نادرا ملازمین سے انتقامی کاروائیوں کا سلسلہ بند کیا جائت اور من گھڑت انکوائیریز کو فوری ختم کیا جائے۔ دیگر اداروں کی طرح نادرا ملازمین کو بھی اظہار کی آزادی اور یونین سازی کا حق دیا جائے۔ نادرا اتھارٹی بورڈ کا قیام عمل میں لایا جائے۔ تمام کنٹریکٹ اور ڈیلی ویجز ملازمین کو مستقل کیا جائے۔