ہم ہر محاذ پر او جی ڈی سی ایل کی نجکاری کے خلاف جدوجہد کریں گے، راجہ سلیم مرکزی صدر ورکرز اتحاد یونین سی بی اے

رپورٹ: PTUDC اسلام آباد

ہم بطورورکرز اتحاد یونین سی بی اے کے عہدے داران یہ واضح کر دیں کہ او جی ڈی سی ایل کے تمام ملازمین ادارے کے تحفظ کے لئے یک آواز ہیں۔ منافع بخش اداروں کی نجکاری کا سب سے زیادہ نقصان خود حکومت پاکستان کو ہو گا، سونے کے انڈے دینے والی مرغی کو ذبح کرنے سے ہر ماہ آنے والا ریوینو نہ صرف رک جائے گا بلکہ ملکی خزانے پر بوجھ کی شکل اختیار کرے گا۔ ان خیالات کا اظہار او جی ڈی سی ایل اتحاد ورکرز یونین کے صدر راجہ محمد سلیم و جنرل سیکرٹری ملک اخلاق نے اسلام آباد نیشنل پریس کلب میں مورخہ 29 ستمبر کو پریس کانفرنس کے دوران کیا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ آج حکومت فرٹیلائز، کراچی الیکٹرک، نجی پاور ہاؤسز اور دیگر سرمایہ داروں کو سبسڈیاں دے رہی ہیں اور اپنے اداروں کو نیلام کرنے میں مگن ہے۔ او جی ڈی سی ایل کے شیئرز کی نیلامی دراصل ادارے کی نجکاری کی کو ششں ہے۔ ہم حکومت پر یہ واضح کر دینا چاہتے ہیں کہ ہم عوام دشمن پالیسیوں کے خلاف متحد ہیں، آج ہمارے ساتھ دیگر اداروں کے قائدین کی موجودگی یہ ثابت کرتی ہے کہ ملک بھر کے ملازمین اور محنت کش حکومت کی ان بے رحمانہ پالیسیوں کے خلاف متحد ہیں۔ ہم ہر محاذ پر نجکاری پالیسی کے خلاف جدوجہد کریں گے۔

آل پاکستان ایمپلائز، پنشنرز و لیبر تحریک کے رہبر حاجی محمد اسلم خان نے اس موقع پر او جی ڈی سی ایل کے ملازمین کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے واشگاف الفاظ میں کہا کہ او جی ڈی سی ایل، سول ایوی ایشن اتھارٹی، ہاؤس بلڈنگ فنانس کارپوریشن، پاکستان سٹیل ملز سمیت تمام سرکاری اداروں کی کسی بھی طرح سے نجکاری پرائیوٹائزیشن کو مسترد کرتے ہیں۔اس کے ساتھ صحت کے شعبے کی نجکاری کے لئے پاکستان میڈیکل کمیشن اور ٹیچنگ ہسپتالوں میں نجکاری کا آرڈیننس 2019ء جیسے کالے قوانین کو مسترد کرتے ہیں۔ ہم سب مل کر ان ریاستی اور منافع بخش اداروں کا تحفظ کریں گے۔ حکومت ان اداروں سے خطیر منافع حاصل کرنے کے باوجود نجی شعبے کے حوالے کرنا چاہتی ہے، جو ہم کسی صورت نہیں ہونے دیں گے۔

پریس کانفرنس میں پیپلز لیبر بیورو سنٹرل پنجاب کے صوبائی صدر اور پاکستان فوڈ ورکرز فیڈریشن کے مرکزی صدر سید نذر حسین شاہ، ایمپلائز یونٹی سول ایوی ایشن کے مرکزی صدر شیخ خالد محمود، پی ٹی یو ڈی سی کے مرکزی جوائنٹ سیکرٹری ڈاکٹر چنگیز ملک، ایچ بی ایف سی ورکمین یونین پاکستان کے صدر راجہ پرویز اختر، یونائیٹڈ سٹاف یونین ریڈیو پاکستان کے جنرل سیکرٹری محمد اعجاز، پاک پی ڈبلیو ڈی اتحاد یونین کے جنرل سیکرٹری سید محمد ذیشان شاہ، سی ڈی اے لیبر یونین کے ڈپٹی جنرل سیکرٹری راجہ اشتیاق احمد، قائد اعظم یونیورسٹی ایمپلائز ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری سید گلفراز حسین کاظمی، پیپلز یونٹی آف پی آئی اے ایمپلائز کے صدر رمضان لغاری، ریلوے لیبر یونین کے نا‏ئب صدر راجہ عمران، آل پاکستان واپڈا ہائیڈرو الیکٹرک ورکرز یونین کے ریجنل ڈپٹی چیئرمین محمد عمران خان، سیکرٹری انفارمیشن سجاد حسین ساجد، میونسپل لیبر یونین میٹروپولیٹن کارپوریشن کے صدر جاوید احمد، جنرل سیکرٹری راجہ عبدالمجید، پیپلز ورکرز یونین پاکستان اسٹیل ملز کے رہنما خاور قریشی، آل پاکستان ورکرز یونین یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن کے مرکزی چیئرمین سید عارف حسین شاہ، آل پاکستان ورکرز الائنس یو ایس سی کے محمد ایاز، جاوید اقبال، ایپکا کے ڈپٹی جنرل سیکرٹری سردار حنیف، پی ٹی ڈی سی ایمپلائز یونین کے صدر ماجد یعقوب اعوان، آل پاکستان گورنمنٹ ایمپلائز کنفیڈریشن کے چیئرمین الحاج عبدالمناف، پی ٹی سی ایل پنشنرز ایسوسی ایشن کے سید امین شاہ اور دیگر مزدور تنظیموں کے نمائندگان بھی موجود تھے۔

آخر میں موجودہ حکومت کی جانب سے آئی ایم ایف کی ایما پر او جی ڈی سی ایل، پی ٹی ڈی سی، ایچ بی ایف سی، سول ایوی ایشن، صحت کے شعبے، بجلی کمپنیوں اور دیگر قومی اداروں کی مجوزہ نجکاری اور توڑ پھوڑ، برطرفیوں، تنظیم سازی پر پابندی، سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں عدم اضافہ، کٹوتیوں، پینشن، سالانہ انکریمنٹ کے خاتمے اور دیگر مزدور کش اقدامات کے خلاف آل پاکستان ایمپلائز، پنشنرز و لیبر تحریک کی کال پر 14 اکتوبر کو پارلیمنٹ ہاؤس کی سامنے احتجاج میں بھرپور شرکت کے عزم کا اعیادہ کیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*