صادق آباد: مہنگائی، بجٹ اور آئی ایم ایف کی پالیسیوں کے خلاف احتجاج

رپورٹ: PTUDC  صادق آباد

پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپئین  PTUDC کے زیراہتمام مہنگائی، بجٹ اور آئی ایم ایف کی پالیسیوں کے خلاف پریس کلب کے سامنے احتجاج کیا گیا۔ احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے PTUDC کے جنرل سیکریٹری قمرالزماں خاں نے سالانہ بجٹ کو مسترد کرتے ہوئے اسے عوام کے لئے ہولناک قراردیا، انہوں نے کہا کہ پاکستان کے ستر فیصد عوام غربت کی لکیر کے نیچے زندگی بسر کررہے ہیں، پیٹرولیم مصنوعات، بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ ان پر جان لیوا بوجھ ہے۔ قرضے حکمران طبقہ لیتا ہے اور اسکی ادائیگی کا بھی خود ذمہ دار ہے، قرضوں کے حصول یا ادائیگی کے لئے عوام پر بوجھ ڈالنا زیادتی ہے جس کے خلاف پاکستان بھر کے عوام کو اپنے گھروں سے نکل کر احتجاج کرنا ہوگا، انہوں نے کہا کہ سرمایہ داری نظام کو بدلنا اس وقت محنت کشوں کا پہلا ایجنڈا ہونا چاہئے۔

پاکستان پیپلز پارٹی سٹی کے صدر اورممتاز قانون دان خالد بن سعید نے لیوی، ظالمانہ ٹیکسوں کے نفاذحکومتی پالیسیوں کو مسترد کرتے ہوئے اسکی سخت مذمت کی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ نظام میں صرف حکمران طبقہ عیاشی کرتا ہے اور اسکی سزا عوام بھگتے ہیں۔ ہائی وے یونین (سی بی اے) کے ڈویژنل صدر چوہدر ی ارشد نے کہا کہ حقیقی حکمران عالمی سامراجی ادارے ہیں ، پاکستان کی سیاسی پارٹیاں آئی ایم ایف کی آلہ کار ہیں، محنت کش طبقے کو اپنی قیادت خود کرنا ہوگی۔ ایمپلائیز یونین فوجی فرٹیلائیزر کمپنی (سی بی اے) کے جنرل سیکریٹری نواب دین لاشاری نے کہا کہ فیکٹری مزدوروں کی اجرت میں اضافے کا اعلان کر کے اس کو جولائی تک موخر کردیا گیا ہے، جب کہ فوری طور پر مہنگائی کرکے ملنے والی اجرت بھی چھین لی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سوائے سوشلسٹ انقلاب کے کوئی راستہ نہیں بچا ہے۔

آدم جی شوگرملز کی یونین کے سابق جنرل سیکریٹر ی پیرجی اشرف نے کہا کہ طبقاتی نظام کو مٹانے کے لئے محنت کشوں کو یکجا ہونا پڑے گا۔ فاطمہ فرٹیلائیزر کمپنی کے مزدوررہنما جہانزیب بابر نے کہا کہ روزگار کے ذرائع پہلے ہی کم ہوچکے ہیں جب کہ مقامی انتظامیہ رہڑی والوں متبادل جگہ فراہم کئے بغیر ان کے خلاف آپریشن کرکے بے روزگار کررہی ہے، یہ صریحاََ زیادتی ہے، اس کو بند ہونا چاہئے۔ انقلابی رکشہ یونین کے صدر ندیم بٹ نے کہا کہ رکشہ والوں کو پانچ ہزار روپے ماہانہ پیٹرول اور پانچ ہزار روپے ماہانہ راشن کی سبسڈی کارڈ فراہم کئے جائیں۔ انقلابی طلبہ محاذ کے چوہدری اظہارنے کہا کہ فیسوں میں ہوش ربا اضافوں نے غریب طالبعلموں کے حصول علم کے دروازے بند ہوچکے ہیں، یونی ورسٹی فیسز اور امتحانی فیسز کے بعد کاغذ کے نرخوں میں اضافے کی وجہ سے کتابوں کی قیمت دگنی ہوچکی ہے، علم دشمنی کی پالیسی ختم کی جائے اور تعلیم کو ہرسطح تک مفت کیا جائے۔

PTUDC کے مسعود افضل کاشی اور عباس تاج نے کہا کہ آئی ایم ایف ایک ڈالر دے کر بیس ڈالر لوٹ کر لے جاتا ہے، یہ نظام مکمل ناکام ہوکر عوام پر بوجھ بن چکا ہے، اسکے حکمران ہارے ہوئے جواری ہیں جو باریاں بدلتے مگر ہر بازی ہار جاتے ہیں،انکی شکستوں کا خمیازہ پاکستان کے کروڑوں محنت کشوں کو اٹھانا پڑتا ہے۔ سرمایہ داری کا خاتمہ اور سوشلسٹ نظام کا نفاذ کئے بغیر کوئی ادنی مسئلہ بھی حل نہیں ہوسکتا۔ پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپئین کے احتجاج میں ٹیکسی کار ورکرز نے بھی شرکت کی۔