حیدرآباد: پاکستان اسٹیل ملز کی نجکاری اور ملازمین کی جبری برطرفیوں کے خلاف احتجاجی مظاہرہ

رپورٹ: جھامن آزاد

مورخہ 20 دسمبر 2020ء کو پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپئین PTUDC  کی جانب سے پاکستان سٹیل ملز کی نجکاری اور 4500 ملازمین کی جبری برطرفیوں کے خلاف پریس کلب حیدرآباد پر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا، جس میں دیگر مزدور تنظیموں، ٹریڈ یونینز کے رہنماؤں اور طلبہ نے بھی کثیر تعداد میں شرکت کی۔ شرکاء نے حکومتی مزدور دشمن پالیسیوں کے خلاف شدید نعرے بازی کی اور عوامی اداروں کی نجکاری کی سخت الفاظ میں مذمت کی ۔

مظاہرین سے خطاب کرتے PTUDC کے صوبائی جنرل سیکرٹری ایڈووکیٹ نثاراحمد چانڈیو، نادرا سے رضا خان سواتی، PTUDC کے پرشوتم، راہول، ایپکا کے میرل بھرگڑی، عوامی ورکرز پارٹی کے جے کمار اور دیگر نے کہا کہ پاکستان اسٹیل ملز اس ملک کا ایک قیمتی اثاثہ ہے، جسے اس ملک کے حکمران اپنے مفادات کی خاطر بیچنا چاہتے ہیں۔

محنت کشوں کو برطرف کرنے والے حالیہ فیصلے سراسرغیرقانونی اورغیرآئینی ہیں، ایک کروڑ نوکریوں کا جھانسہ دینے والا وزیراعظم آج ملک کے غریب مزدوروں کے چھولے ٹھنڈے کرنے پراٹا ہوا ہے۔ اس کے ایسے اقدامات سے ہر شعبے کے ملازمین احتجاج کرنے پر مجبورہیں۔ IMF اور دیگر عالمی مالیاتی اداروں کی ایماء پر مزدور دشمن قوانیں بنائے جا رہے ہیں، جس کے نتیجے میں آج ہر روز نئے ٹیکس لگائے جانے سمیت اداروں میں  ڈاؤن سائزنگ کے ذریعے بیروزگاری میں اضافہ کیا جا رہا ہے۔ موجودہ حکومت کی فسطائی پالیسیوں کی بدولت ہراحتجاج کرنے والے پر تشدد کا سلسلہ بڑھتا جا رہا ہے۔

 

اسلام آباد میں سیکنڈری سکول ٹیچرز پر ہونے والے لاٹھی چارج اور اساتذہ کی گرفتاری کی شدید مذمت کرتے ہیں اور ہمارا مطالبہ ہے کہ اساتذہ کو فوری طور پر مستقل کیا جائے۔ اسی طرح ہم سمجھتے ہیں کہ اسٹیل مل کی نجکاری کو فوری طور روکتے ہوئے ملازمین کی برطرفیوں کے احکامات کو واپس لیا جائے۔