کراچی: سٹیل ملز ملازمین کا جبری برطرفیوں اور نجکاری پالیسی کے خلاف نیشنل ہائی وے پر دھرنا

رپورٹ: PTUDC کراچی

اسٹیل ملز کی مزدورتنظیموں کی آل ایمپلائز ایکشن کمیٹی کی جانب سے پاکستان سٹیل کی نجکاری اور ملازمین کی جبری برطرفیوں کے خلاف اکبر میمن، عاصم بھٹی، ممتاز بھٹو، یاسین جامڑو، اکبر ناریجو، دھنی بخش سموں، شوکت کورائی، سلیم گل، مرزا مقصود، نسیم حیدر، راؤ خالد و دیگر کی قیادت میں سٹیل مل کے سامنے نیشنل ہائی وے اور پاکستان سٹیل کے جناح گیٹ کے سامنے احتجاجی دھرنا دیا گیا۔


دھرنے میں ملازمین نے وفاقی حکومت کے خلاف سخت نعرے بازی کی، دھرنے کے باعث کراچی ٹھٹھہ اور سٹیل انڈسٹری کو جانے والی شاہراہیں دو گھنٹے سے زائد بند رہنے سے گاڑیوں کی قطاریں لگ گئیں۔ اس موقع پر رہنماؤں نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان سٹیل انتظامیہ اور وفاقی حکومت ملک کے سب سے بڑے صنعتی ادارے پاکستان سٹیل کو بند کرکے فروخت کرنا اورسٹیل مل کے ہزاروں ملازمین کو ایک ماہ کی تنخواہ دیکر نوکریوں سے برطرف کرنا چاہتے ہیں، اس سازش کو ہم کسی بھی صورت میں کامیاب ہونے نہیں دینگے۔ ہم وفاقی حکومت کو بتانا چاہتے ہیں کہ مزدوروں کو کسی بھی صورت میں جبری برطرف کرنے نہیں دیں گے اور نہ ہی سٹیل مل کی زمین فروخت کرنے دیں گے۔