نادرا میں ’لازمی سروس ایکٹ‘ اور دیگر بنیادی حقوق غصب کرنے والے ضابطوں کا خاتمہ کیا جائے، پی ٹی یو ڈی سی

رپورٹ: انفارمیشن بیورو

نادرا کا قیام 2001ء میں ہوا اوراتھارٹی کے قیام سے لے کرآج تک ملازمین بنیادی حقوق سے محروم ہیں۔ نادرا اپنے قیام سے لیکر اب تک حاضر اور ریٹائرڈ آرمی افسران کے زیر تسلط رہا ہے جس کی وجہ سے سول ادارہ اور اور سول ملازمین آمرانہ احکامات اور قوانین کے زیر اثررہے ہیں۔ دوسرے نظام سروس کی وجہ سے ملازمین احساس کمتری اور محرومی کا شکار رہے ہیں۔ نادرا کے ملازمین کانٹریکٹ پر تھے اور مکمل جاب سیکیورٹی نہ ہونے کی وجہ سے معمولی قسم کی شکایات پر ملازمین کو برطرف کردیا جاتا تھا۔یونین کی طویل جدوجہد کے بعد 2012 میں نادرا ملازمین کو مستقل کیا گیا۔ مستقلی کے بعد بھی نادرا ملازمین کے تمام بنیادی حقوق ضبط رہے۔ نادرا ان اداروں میں شامل ہے جوکہ آج بھی سروس اسٹریکچرسے محروم ہے۔

پاکستان ٹریڈ یونین ڈ یفنس کمپیئن PTUDC کا مطالبہ ہے کہ نادرا ملازمین کیلئے یونین اورملازمین سے مشاورت اوررضامندی کے بعد فیڈرل سروس اسٹریکچر جاری کیا جائے۔ جن نادرا‘ملازمین کو اپنے حقوق کی جدوجہد کی پاداش میں برطرف کیا گیا ان کو واپس تمام تر تنخواہوں اور واجبات کے بحال کیا جائے۔ نادرا میں ”لازمی سروس ایکٹ“ اور دیگر بنیادی حقوق غصب کرنے والے ضابطوں کا خاتمہ کیا جائے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*