اسٹیل ملز کے مزدوروں کی جبری برطرفیوں کی شدید مذمت کرتے ہیں، ریلوے لیبر یونین کوئٹہ ڈویژن

رپورٹ: ریلوے لیبر یونین

ریلوے لیبر یونین کوئٹہ ڈویژن کے ڈویژنل باڈی کا پہلا اجلاس مورخہ 28 نومبر کو ڈویژنل صدر نسیم گشکوری کے زیر صدارت منعقد ہوا۔ نظامت کے فرائض ڈویژنل جنرل سیکرٹری اکرم گل نے انجام دئیے۔ جبکہ مرکزی ڈپٹی چیف آرگنائزر حاجی محمد اسحاق جمالی مہمان خصوصی تھے۔ اجلاس میں حکومتی مزدور دشمن پالیسیوں بالخصوص قومی اداروں کی نجکاری اور روزانہ کی بنیاد پر اداروں سے وابستہ محنت کشوں کی جبری برطرفیوں، مہنگائی، مزدوروں کے اجرت نہ بڑھنے سمیت تنظیمی معاملات پر سیر حاصل بحث کی گئی۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے نومنتخب ڈویژنل صدر نسیم گشکوری نے اسٹیل ملز کے مزدوروں کی جبری برطرفیوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ سرمایہ دارانہ قوتوں اور IMF کے ایجنٹ حکمرانوں نے جب سے اقتدار حاصل کیا تب سے اب تک نہ صرف نئی بھرتیاں نہیں کیں گئی۔ بلکہ پہلے سے برسرروزگار محنت کشوں کی برطرفیوں کا نہ رکنے والا سلسلہ شروع کرکے بے روزگاروں کی تعداد بڑھانے میں لگی ہوئی ہے۔ جس سے یقینی طور پر معاشرہ دو واضح طبقوں میں بٹ چکا ہے۔ دوسری طرف مہنگائی کا جن بوتل سے نکل کر غریب عوام کو نگل رہا۔ اگر یہی حکومتی پالیسیاں برقراررہیں توعوام بالخصوص محنت کش طبقہ مٹ جائے گا۔ ایسے میں ضروری ہے کہ محنت کش، عوام، طلبا اور کسانوں کو ایک ساتھ کرتے ہوئے مزدور انقلاب کیلئے جدوجہد میں تیزی لائی جائے۔ اور معاشرے کی طبقاتی بنیادوں پر تشکیل نو کی جائے۔ تاکہ مٹھی بھر بالادست طبقہ کے لوٹ کھسوٹ کے نظام کو تبدیل کرکے انصاف مساوات اور امن کے تقاضوں سے ہم آہنگ ایک نئے انقلابی نظام کو متعارف کیا جائے جہاں وسائل پر سب کا مساوی حق ہو۔

انہوں نے کہا کہ قومی اداروں کی نجکاری دراصل اپنے اپنوں کو نوازنے کی سازش ہے اپنے اسپانسرز کو قومی ادارے بیچے جائیں گے، جیسے اپنے اسپانسرز کو نوازنے کیلئے مصنوعی مہنگائی کا حکومت نے ڈرامہ رچایا ہوا ہے۔ جس سے محنت کش ہی متاثر ہو گا۔ اس موقع پر ڈویژنل جنرل سیکرٹری اکرم گل، چئیرمین میر گل حسن لہڑی، آرگنائزر میر قمبر خان بنگلزی، سینئر نائب صدر بلاول رند، سینئر وائس چیرمین عبدالرزاق ترین، جوائنث سیکرٹری جمال بگٹی و دیگر نے کہا کہ مارچ کے آخری ہفتہ میں کوئٹہ میں مرکزی کنونشن کا انعقاد کیا جائے گا۔