آئی ایم ایف کے بجٹ اور چھانٹیوں کے خلاف لاہور اور راولپنڈی میں ریلوے ملازمین کا احتجاج

رپورٹ: PTUDC

ریلوے کے ملازمین نے اپنی انقلابی روایت کو برقرار رکھتے ہوئے، ’ایک کا زخم، سب کا زخم‘ کے نعرے پر متحد ہو کر آئی ایم ایف کی تجویز کردوہ پالیسیوں کے خلاف بغاوت کا علم بلند کیا ہوا ہے، اس سلسلے میں ان کا احتجاج 13 جون سے جاری ہے۔ اس دوران ریلوے کے مختلف شعبوں میں روزانہ کی بنیادوں پر احتجاج کے بعد کل مورخہ 14 جولائی کو ملک بھر میں ریل مزدور اتحاد کے زیر اہتمام زبردست احتجاج کیا گیا۔ اس سلسلے میں مرکزی جلسہ ریلوے ہیڈ کواٹر لاہور میں منعقد ہوا جس میں ریل اتحاد میں شامل تمام یونینزریلوے لیبر یونین، ڈپلومہ انجینئر فیڈریشن، ریلوے ورکرز یونین سی بی اے ورکشاپس، سپروائزار ویلفیئر ایسویسی ایشن میں شامل ریلوے کے سینکڑوں محنت کش نے شرکت کی۔ اس دوران آئی ایم ایف اور حکومت کے خلاف سخت نعرہ بازی کی گئی۔

اظہار یکجہتی کے لئے پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپئین PTUDC، حقوق خلق موومنٹ، سول ایوی ایشن ایمپلائز یونٹی، پی آئی اے، انصاف لیبر یونین پاکستان سٹیل ملز لاہور،  پنجاب پروفیسرز اینڈ لیکچرزایسوسی ایشن، انقلابی طلبہ محاذ RSF، پراگریسیوسٹوڈنٹس کلیکٹو PSC اور فیروزپور روڈ پر واقع گارمنٹس فیکٹریوں سے محنت کشوں کی بڑی تعداد نے بھی شرکت کی۔ اس موقع پر مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم آئی ایم ایف کے خلاف جدوجہد جاری رکھے ہوئے ہیں اور مطالبہ کرتے ہیں کہ ملازمین کی تنخواؤں میں 100 فیصد اضافہ کرکے چھانٹیوں کا سلسلہ بند کیا جائے اور ریل مزدور اتحاد کے تسلیم شدہ 3 مطالبات پر فوری عمل درآمد کیا جائے۔ آخر میں اعلان کیا گیا کہ اگر مطالبات پر عمل نہ کیا گیا تو 5 اگست کو ملک بھر میں ریلوے کے محنت کش ہڑتال کریں گے جس میں پشاور سے لے کر کراچی تک ریل کا پہیہ جام کرنے کر دیا جائے گا۔

 راولپنڈی ریلوے  لوکو شیڈ میں احتجاجی جلسہ

راولپنڈی ریلوے لوکو شیڈ میں ریلوے لیبر یونین اور ریل مزدور اتحاد کے زیر اہتمام احتجاجی جلسے کا انعقاد کیا گیا۔ جلسے میں 300 سے زاٸد مزدوروں نے شرکت کی۔ ریلوے کا یہ مظاہرہ مزدور یکجہتی کی ایک زبردست مثال تھا۔ ریلوے کے مزدوروں کے تمام مطالبات سے یکجہتی کرنے اور مشترکہ جدوجہد کرنے کے لیے راولپنڈی اسلام آباد کی دیگر قومی اداروں کی ٹریڈ یونین قیادت نے بھرپور شرکت کی۔ ان یونینز میں میونسپل لیبر یونین راولپنڈی، ریلوے ورکرز یونین، پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپیٸن PTUDC، انقلابی طلبہ محاذ RSF، ایمپلاٸز یونٹی سول ایوی ایشن اتھارٹی اور پاکستان لوکل گورنمنٹ فیڈریشن شامل تھیں۔

جلسے سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ کہ موجودہ حکومت IMF کی ایما پر مزدوروں کو زندہ درگور کرنے جا رہی ہے۔ مہنگاٸی، بیروزگاری، لوڈشیڈنگ نے عوام کا جینا دو بھر کر دیا ہے۔ نجکاری کے مسلسل حملے اور اداروں سے چھانٹیوں کا جو منصوبہ بنایا جا رہا ہے ہم اس کو مسترد کرتے ہیں اور اگر حکومت نے یہ فیصلہ واپس نہ لیا تو ہم نہ صرف ریل کا پہیہ روک دیں گے بلکہ ہم ایئرپورٹ بھی بند کر دیں گے۔ مزدور نے ابھی اپنی طاقت کو استعمال میں نہیں لایا، ہم پورے پاکستان کے مزدوروں کو متحد کر کے ان حکمرانوں کو گھر بھیج دیں گے۔ پروگرام میں شریک ٹریڈ یونين قیادت نے مزدور ایکشن کمیٹی بنا کر مشترکہ جدوجہد کا عزم کیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*