فیصل آباد: ایم ٹی آئی کے خلاف الائیڈ ہسپتال کے محنت کشوں کی پہلی فتح

رپورٹ: ڈاکٹرعمر رشید

پنجاب بھر میں MTIایکٹ جیسے ظالمانہ اور غیرانسانی حکم کو بڑے بھونڈے انداز میں لاگو کرنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔ محکمہ صحت کے ملازمین پر اس فیصلے کو تسلیم کرنے کے لئے دباؤ ڈالا جا رہا ہے، ہسپتالوں میں اس وقت خوف کی فضا قائم کی گئی ہے جس میں انتظامیہ کی طرف سے طاقت کا استعمال بھی کیا جا رہا ہے۔ لیکن دوسری جانب محنت کش بھی اس ظالمانہ فیصلے کے خلاف سرگرم عمل ہو چکے ہیں۔ اس سلسلے میں 25ستمبر کو لاہورمیں گرینڈ ہیلتھ الائنس کی جانب سے گورنرہاؤس کے سامنے احتجاج منعقد کرنا ایک اہم پیش رفت تھی۔ تاہم تحریک کی جڑت کو توڑنے کے لیے انتظامیہ کی جانب سے ملازمین کو کئی پر کشش مراعات فراہم کرنے کے وعدے کئے جا رہے ہیں۔ تمام تر اقدامات کے باوجود تحریک کو کچلا نہیں جا سکا بلکہ یہ تحریک آئندہ آنے والے دنوں میں مزید مضبوط ہو گی۔

اس کا عملی اظہار الائیڈ ہسپتال فیصل آباد میں ہوا جہاں گرینڈ ہیلتھ الائینس اور محکمہ صحت کے محنت کشوں کے رہنما حکیم خان نیازی کو دو روز قبل ملازمت سے برطرف کرنے کے احکامات جاری کئے گئے تھے اور انہیں جبراً ہسپتال سے گھر بھیج دیا گیا۔ تاہم اس فیصلے کے خلاف محنت کشوں میں سخت غم و غصہ پایا گیا جس کا اظہار 27 ستمبر کو الاہیڈ ہسپتال فیصل آباد میں ہوا جو کہ ایک میدان جنگ کا منظر پیش کر رہا تھا پولیس کی بھاری نفری بکتر بند گاڑیوں کے ساتھ ہسپتال کو حصار میں لیا ہوا تھا۔ لیکن ڈاکٹرز اور پیرامیڈیکس کے ملازمین نے وی سی آفس کا گھیراؤ ہوا تھا۔ اس دوران محنت کشوں کے ہاتھ میں مکمل ہسپتال کا کنٹرول تھا ان کی مرضی کے بغیر کوئی کام کرنا بھی ناممکن تھا۔ملازمین کے جانب سے سخت احتجاج کیا گیا اور فاشسٹ حکومت کے خلاف شدید نعرہ بازی کی گئی۔ ملازمین کی یکجہتی دیدنی تھی۔ ایک ہسپتال کی سطح پر افسر شاہی کو پیچھے ہٹنا پڑا اور حکیم خان نیازی کو بحال کر دیا گیا۔

فیصلے کے بعد محنت کشوں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اور انہوں نے جدوجہد کو مزید آگے بڑھانے کے عزم کا عیادہ کیا۔  یہ محنت کشوں کی طاقت کی شاندار مثال ہے۔ اگر اسی یکجہتی اوربہادری کا مظاہرہ کیا جاتا ہے تو اس عوام دشمن نجکاری کے وار کو بھی روکا جا سکتا ہے۔ پاکستان ٹریڈ یونین ڈیفنس کمپئینPTUDC محنت کشوں کی ہر سطح کی جدوجہد میں شانہ بشانہ لڑے گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*